Month: April 2017

سلمی اور کرونس ۔۔۔ شاہین کاظمی

April 16, 2017

سلمی اور کرونس شاھین کاظمی گھپ اندھیرا اور اتنا گہرا سکوت کہ سانسوں کی آواز بھی کسی شورِ قیامت سے کم نہ تھی، چاروں طرف پھیلی ہوئی اک عجیب سی بوباس، کھردرا اور سرد فرش، ساتھ چھوڑتے ہوئے اعصاب اور شل ہوتا ہوا بدن،ذہن پر جیسے جالے سے تنے ہوئے تھے، کچھ بھی تو محسوس […]

Read More

بکنے کا غم ۔۔۔ اشفاق سلیم مرزا

April 16, 2017

بکنے کا غم (اشفاق سلیم مرزا) سر بازار مقتلوں پر پھر سے لفظ سجے تھے لفظ جن کے جمال سے رنگ و آہنگ و صوت و صدا نغمہ و شعر داستان خیر و شر سب رقم ہوئے تھے دیر تک مقتلوں میں پڑے سوچتے رہے شاید رنگ و نور کا کوئی ہالہ بنے اور سخن […]

Read More

غزل ۔۔۔ شہناز پروین سحر

April 16, 2017

غزل (شہناز پروین سحر) زمیں کے گُل نگلنا چاہتا ہے پہاڑ اب آگ اگلنا چاہتا ہے ہوا کے ساتھ چلنا چاہتا ہے مرا بچپن مچلنا چاہتا ہے اسے کہہ دو کہ صورت بھی بدل لے فقط کپڑے بدلنا چاہتا ہے کھلونے میں دھماکے کی خبر ہے مگر بچہ بہلنا چاہتا ہے مجھے پربت سے کھائی […]

Read More

تے ملاح چل دے رہے۔۔۔ ترس پال کور

April 16, 2017

  تے ملاح چلدے رہے (پروفیسر ترس پال کور) چِمنیاں چوں اُٹھ  رہیا دھوآں آکاش چ پھیلدا رہندا۔ دھونئیے دے بدل آسمان چ چن نال لُکن میٹی کھیڈن لگ جاندے۔ پُورے دِن دے اجیہے دؤر توں بعد دیر رات تک چِڑیاں، جنوراں نوں ساہ لین لئی شاید صاف ہوا مِلدی تے اوہ تھکے ٹُٹے شانت ہو […]

Read More

پنجابی غزل ۔۔۔ رومانہ چودھری

April 16, 2017

غزل (رومانہ چودھری) اکو رُکھ تے پَل کے چڑیاں رہ نہ سکیاں رَل کے چڑیاں باز کمینے، کچیاں کھا گئے۔۔۔! بندے کھا گئے، تل کے چڑیاں اِک اِک پنجرے پا دیندے نیں  ماں پے ہتهیں، ول کے چڑیاں مُڑ کے جنگلیں، جا وڑئیاں نیں  شہراں توں، سڑ بل کے چڑیاں  لے نی مائے، ٹُر چلیاں […]

Read More

موم کی مریم۔۔۔ جیلانی بانو

April 9, 2017

موم کی مریم جیلانی بانو آج بھی اندھیرے میں لیٹا میں خیالی ہیولوں سے کھیل رہا تھا۔ اور جب بھی اندھیرا چھا جاتا ہے۔ تم نہ جانے کہاں سے نکل آتی ہو۔ جیسے تم نے تاریکی کی کھوکھ سے ہی جنم لیا ہو۔ اور مجبورا مجھے جلے ہوئے سگریٹ کی راکھ کی طرح تمہیں بھی […]

Read More

میرے خواب ۔۔۔ سعید الدین

April 9, 2017

میرے خواب (سعید الدین) جہاں تک میری آواز نہیں پہنچ سکتی میرے خواب وہاں تک چلے جاتے ہیں جہاں میرے قدم تھک جاتے ہیں وہاں میرے خواب آگے چلنا شروع کر دیتے ہیں جب تم میری رسائی سے دور ہو جاتی ہو میرے خواب تمہیں طھو آتے ہیں جس زمیں پر میں شکست کھاتا ہوں […]

Read More

شوق دا مُل ۔۔۔ نیلما ناہید دُرانی

April 9, 2017

شوق دا مُل ( نیلما ناہید درانی ) شاہ زمان نے وردی پا کے شیشے ول تکیا تے اوہنوں اپنے اتے بڑا فخر محسوس ہویا۔ ایہہ وردی اوہنوں بڑی اوکڑاں نال ملی سی۔ اوہدے پیو تاجدین نے اوہدے جمدے ای ایہہ خواب ویکھنا شروع کر دتا سی کہ اوہ وڈا ہو کے تھانیدار بنے گا۔ […]

Read More

چانن اکھیاں دا ۔۔۔ زاہد حسن

April 9, 2017

چانن اکھیاں دا (زاھد حسن) نہ دنیا نوں اساں تکیا نہ درشن یار کرائے چانن اکھیاں دا اسیں رب نوں موڑن ائے اک تانگھ تیرے ملن دی ساڈے لوں لوں کیتے چھیک سانوں سِک تیری دا سیک آ ، پرت، سجن تے، سانہوں ساڈی اکھیوں ویکھ جثے ترے دی تانگھ تروپیوں اساں سینے کاج کرائے […]

Read More

غزل ۔۔۔ صابر ظفر

April 9, 2017

غزل ( صابر ظفر) اگرچہ ہر کوئی فٹ پاتھ سے گزرتا ہے مگر کہاں کوئی دن رات سے گزرتا ہے اگرچہ سنتا ہے کوئی مرے سبھی دکھڑے مگر کہاں میرے حالات سے گزرتا ہے نہیں فراغ کہ گزرے وہ خانہ دل سے جو شخص ارض و سماوات سے گزرتا ہے سما گیا جو میرے ہاتھ […]

Read More
Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: