World Literature

سال 2018 کی آخری غزل ۔۔ فرح خاں

January 3, 2019

سال 2018 کی آخری غزل ( فرح خاں ) پرایا ہجر اگتا ہے زمینِ خشک بنجر میں اداسی تلملاتی ہے سہولت سے جو منظر میں سنو کردار لازم ہو گا پیڑوں اور ہواؤں کا پرندوں کی اذیت کا کسی شاخِ گلِ تر میں کسی داسی کے دل میں وصل کی خواہش اگر جاگے کرے اشنان […]

Read More

آئیہ اواخر ۔۔۔ ذوالفقار فرخ

January 3, 2019

آئیہ اواخر ( ذوالفقار فرخ ) ہم سنبھلتے تو تب بھی کیا ہوتا برف کی اُن سِلوں پہ تھے ہم لوگ جو پھسل جاتی ہیں ٹھہرتی نہیں برف کے ریگزار ِ سرد میں یہ چھیل دیتی ہیں منظروں کے بدن پاؤں پیوست ہو چکے ہیں مگر مت سمجھنا کہ ہم گریں گے نہیں ایک وقت […]

Read More

لما پیا دیہاڑا ۔۔۔ فاطمہ مہرو

January 3, 2019

لما پیا دیہاڑا ( فاطمہ مہرو ) باہواں دَھر کے اکھیاں تے اُڈیکاں لایئاں لمیاں جندڑی حالے تک لـمی پئی اے تے منجیاں تے چیتے دیاں دُھپاں ویہڑے وچ سدھراں دی بوکر پِھری اے مائے نی مینوں گھڑے توں سوہنی دا پانی پیا خورے لتھے کدھرے گَل تھلے ہنجواں دا گُھٹ اج نیئں او میرا […]

Read More

نیلی نوٹ بک 17 ۔۔۔ ڈاکٹر انور سجاد

December 29, 2018

نیلی نوٹ بُک ( عمانویل کزا کیویچ )  مترجم: ڈاکٹر انور سجاد عمانویل کزا کیویچ 1913 میں یوکرین میں پیدا ہوا ۔1932 میں اسکی نظموں کا پہلا مجموعہ ” ستارہ ” کے نام سے شائع ہوا جس نے اسے پوری دنیا سے متعارف کروایا۔ بعد ازاں اس کی لکھی کتابیں ، اودر کی بہار، دل […]

Read More

کالیے دی کہانی ۔۔۔ انور علی

December 29, 2018

کالیے دی کہانی ( انور علی ) ریڈیو والے مینوں کسے منگل نوں فون کردے نیں “سانوں جمعرات لئی اک چھے منٹ دی کہانی دی لوڑاے۔ جیکر تسیں کل ساڈھے باراں وجے آکے ریکارڈ کروا دیوتے بڑی چنگی گل اے۔ “ میرے کجھ سمجھدار بیلی ریڈیو والیاں نوں تے اوہناں دیاں لوڑاں نوں سمجھدے نیں۔ […]

Read More

چیِک ۔۔۔ محمود احمد قاضی

December 29, 2018

چِیک ( محمود احمد قاضی ) پنڈوں شہر آئے بندے نوں اج تیجا دن سی تے اوہ ایس شہر دے سبھ توں چوکھے رولے گولے والے تے رونقی چونک وچ کھلوتا ہر آن جان والے توں پچھی جا رہیا سی، ” بھلیو لوکو کیہہ تہانوں پتہ اے جے بہت چر پہلاں ایتھے ای دکھن پاسے […]

Read More

غزل ۔۔۔ مصطفے زیدی

December 29, 2018

غزل ( مصطفے زیدی ) اب جی حدود سود و زیاں سے گزر گیا اچھا وہی رہا جو جوانی میں مر گیا پلکوں پہ آ کے رک سی گئی تھی ہر ایک موج کل رو لیے تو آنکھ سے دریا اتر گیا تجھ سے تو دل کے پاس ملاقات ہو گئی میں خود کو ڈھونڈنے […]

Read More

ایک نظم ۔۔۔ ابرار احمد

December 29, 2018

( ابرار احمد ) ایک نظم ہر روز کوئی قلم ٹوٹ جاتا ہے کوئی آنکھ پتھرا جاتی ہے کوئی روزن بجھ جاتا ہے کوئی چہرہ ساکت ہو جاتا ہے کوئی سسکی جاگ اٹھتی ہے ار کوئی ہاتھ جھڑ جاتا ہے ہر روز کوئی چھت بیٹھ جاتی ہے کوئی درخت گر جاتا ہے کوئی آہٹ رخصت […]

Read More

میں جانتی ہوں ۔۔۔ عائشہ اسلم

December 29, 2018

میں جانتی ہوں ( عائشہ اسلم ) میں جانتی ہوں اس عمر میں جھولا جھولنے کا انجام کیا ہوتا ہے مجھے سر کے بل یا اوندھے منہ گرنا ہوگا میں پرندوں کا سفر دیکھنا چاہتی ہوں مگر وہ کسی بات پر آمادہ نہیں ہوتے میں خواہشوں کو جلاوطنی کی دھوپ سے بچا بھی لوں تو […]

Read More

بے مصرف ۔۔۔ ثانیہ شیخ

December 29, 2018

بے مصرف ( ثانیہ شیخ ) تمہارے گھر میں بھیاک ایسا کمرہ توہو گاجہاں ہم بے مصرف ضروری اشیاءپھینک دیتے ہیںجنہیں ہم خود سے الگ بھینہیں کرنا چاہتےاور برتنا بھی نہیں ممکنسو ایسا کرومری محبت وہاں رکھ دویہ بے مصرف بھی ہےاور دیکھو قیمتی بھی ہےکسی آنے والے زمانے میںجب یہ ہنگامِ عمر اپنیمدت پوری […]

Read More
Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: