غزل ۔۔۔ ظہیر کاشمیری

غزل

(ظہیر کاشمیری)

نظارہ ء آغاز سفر ہوش ربا تھا

اک نالہ شبگیر تھا یا شور درا تھا

جب باد خزاں گزری تو ہر راہ تھی خاموش

جب باد صبا گزری تو اک حشر بپا تھا

وارفتگی دل کا وہ عالم نہیں بھولا

گلشن پہ بھی جب دشت کا احساس ہوا

رسوا نہ ہوئے منت رہبر نہ اٹھائی

تنہا جو چلے تھے تو ہمارا بھی خدا تھا

اے برق ذرا صحن چمن سے بھی گزر جا

تیرے لئے ہر برگ چمن دست دعا تھا

کھولی جو ظہیر اس نے میرے پاوں کی زنجیر

ھونٹوں پہ فغاں تھی تو دھواں دل سے اٹھا تھا

Advertisment

Be the first to comment

Share your Thoughts: