رحمان بابا ۔۔۔ پشتو نظم

پہ شپہ وینے د مظلوم خوری

پشتو نظم

رحمان بابا

رات کو مظلوموں کا لہو پیتا ہے

پہ شپہ وینے د مظلوم خوری

صبح منبر پر چڑھ کے وعظ کرتا ہے سبا کنبینی پہ منبر
دل ایسا ہے جیسے کالا توا پہ زرہ تور لکہ تبئی دہ      
مکھڑا  چاند جیسا پہ مخ سپین لکہ قمر         
دنیا کی دولت کے لئے خوار ہے       دنیا پہ طلب کرحئی         
لیکن اپنے آپ کو قلندر کہلواتا ہے بولی زان پہ قلندر           
کلمہ تو ہر وقت زبان پر ہے کلیمہ وائی پہ ژبہ           
لیکن دل یقین سے خالی ہے پہ زرہ نہ لری باور         
اس سے بڑا منافق کون ہے پہ مثال د منافقو              
یہ نہ مسلمان ہے نہ کافر

 

نہ مسلم وی نہ کافر         

Be the first to comment

Share your Thoughts: