تنویر قاضی … سیڑھیوں میں بیٹھی ھوئی نظم

سیڑھیوں میں بیٹھی ھوئی نظم

سیڑھیوں میں بیٹھی ھوئی نظم

تنویر قاضی

وہ کروشیا کام میں مصروف تھی
اُس نے نام کاڑھا
”’ محبت ”’
اِتنے میں ، نظم
اُس کا ہاتھ پکڑے
لان میں لے آئی
ڈھیروں باتیں ھوئیں
لیکن ساری ادُھوری
آھِستہ سے
دُھوپ ڈھلی
”اُس نے”
تنہائی اوڑھتے ھوئے
پوشاک بدلی
آئینہ
سلوٹوں کی گُفتگُو میں
جھُوٹ نہ بول سکا
 شام سیڑھیاں اُترنے لگی ۔۔

Advertisment

Be the first to comment

Share your Thoughts: