قطعات ۔۔۔ شہناز پروین سحر

 

قطعات

( شہناز پروین سحر )

ایک تابوت مرے قد کے برابر بھیجا

ساتھ اک مرتا ہوا زخمی کبوتر بھیجا

اس سے نفرت بھی نہ ہو پائی محبت کیطرح

اس نے ہر جذبہ مرے رتبے سے کم تر بھیجا

ــــــــــــــــــــــــــــــــ٭٭٭ـــــــــــــــــــــــــــــــــ

جدھر گیا ہے وہ سب کو ا دھر ہی جانا ہے

جو جی رہے ہیں انہیں بھی تو مر ہی جانا ہے

ذرا سے بوجھ سے زنجیر ِ عدل ٹوٹ گئی

یہ منصفی کا ہنر تھا ہنر ہی جانا ہے

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

مٹی جنون ِ رقص میں رندوں سے جا ملی

اونچی اڑان والے پرندوں سے جا ملی

اندیشے خوف پہن کے بیٹھے رہے سحر

ہرنی خود اپنے آپ درندوں سے جا ملی

Advertisment

Be the first to comment

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.