اعتبار کا ساحل ۔۔۔ عرشی ملک

اعتبار کا ساحل

( ارشاد عرشی ملک )

رابطوں کی ریت پر پھیلے ہوئے
میلوں تلک
لفظوں کے خالی سیپ ہیں 
معنی و مفہوم کے موتی کہیں گمُ ہو گئے
ہر طرف ہے ،بے یقینی کا غبار
تیر ہیں لہجوں کے،دل کے آر پار
۔۔۔۔۔
چل رہی ہیں آندھیاں ،شبہات کی
اُڑ رہی ہے ریت ،الزامات کی
مسکراتے ،نرم لہجے کھو گئے
خوش نما چہرے ،بھیانک ہو گئے
۔۔۔۔۔۔
بے یقینی کے سمندر میں ہوں میں 
شَل ہیں جسم و جاں 
بھروسہ تار تار
ٹوٹتی جاتی ہیں سانسیں بار بار
جانے کتنی دُور ہے ساحل مرا
نام ہے جس کا،یقین و اعتبار
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: