غزل ۔۔۔ مختار صدیقی

غزل

( مختار صدیقی )

نور ِ سحر کہاں ہے اگر شام ِ غم گئی

کب التفات تھا کہ جو خوئے ستم گئی

کن منزلوں کی دھن ہے َ کہ اب بیش وکم کی لاگ

مجبور ِ زیست دل سے تیرے یک قلم گئی

کیا لوگ تھے کہ جو غم ِ جاناں میں مر مٹے

اے روزگار، کیوں تیری گردش نہ تھم گئی

کچھ تو خزاں کا پاس بھی لازم ہے نغمہ گر

مانا، بہار، خالق ِ ہر زیر وبم گئی

اب ہو چلی ہے زندگی کرنے کی خو ہمیں

اب مہرباں نہ ہو کہ امید کرم گئی

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: