فارسی غزل ۔۔۔ امیر خسرو

فارسی غزل

(امیر خسرو)

عشق تو ہر لحظہ فزوں می شود

دل ز غمت قطرہء خوں می شود

عشق تیرا ہے کہ ہر لحظہ فزوں ہوتا ہے

اور دل ہے کہ ترے درد میں خوں ہوتا ہے

در ہوس سلسلہء زلف تو

عقل مبدل بجنوں می شود

یہ ہوس ہے کہ ترا سلسلہء زلفِ دراز

ہوش اس موڑ پہ تبدیلِ جنوں ہوتا ہے

بسکہ گراں است سر از جامِ عشق

زیرِ سرم دستِ ستوں می شود

بسکہ مشکل ہے اٹھانہ سرِ پیمانہء عشق

زیرِ سر ہاتھ دھرا ہو تو ستوں ہوتا ہے

عشق تو ورزیم کہ سلطانِ عقل

در کفِ عشق تو زبوں می شود

عشق میں تیرے جئیوں اے مرے سلطانِ خرد

ہاتھ میں عشق کے آخر تو زبوں ہوتا ہے

دل دلِ خسرو نگر آنِ آتش است

کز دہش دودِ بروں می شود

خسرو کے دل میں سلگتی ہے وہ آتش جس سے

منہ سے اب اس کے صدا دودِ بروں ہوتا ہے

Advertisment

Be the first to comment

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.