زمیں کے ساتھ مرا دل جھگڑتا رہتا ہے ۔۔۔ رفیع رضا

ز

زمیں کے ساتھ مرا دل جھگڑتا رہتا ہے

رفیع رضا

زمیں کے ساتھ مرا دل جھگڑتا رہتا ہے

اور آسمان کا نقشہ بگڑتا رہتا ہے

یہ روشنی اُسی مجذوب کے لئے تو نہیں

جو آ تی جاتی شُعاعیں پکڑتا رہتا ہے

لگا ہوا ہے بدن میں جو سانس کا پودا

یہ بار بار یہاں سے اُکھڑتا رہتا ہے

سفر میں دھیان کی جانب سے ہے کُچھ آسانی

بدن کا رستہ تو پاؤں پکڑتا رہتا ہے

چمک دمک یہیں رہتی ہے میرے ہونے  کی

اُدھر خلا پہ مرا سایہ پڑتا رہتا ہے

وُہ قد سُخن کے شجر کا نکال بیٹھا ہوں

کہ بُور اور درختوں پہ جھڑتا رہتا ہے

مرے مزاج کو بخیہ گری نہیں آتی

تعلقات کا دھاگا اُدھڑتا رہتا ہے

کھنڈر کو آنکھ کی ویرانی میں بکھرنا تھا

وُہ کم پڑی ہے سو دل میں اُجڑتا رہتا ہے

تھکا دیا مرے ہمزاد نے رضا مُجھ کو

میں مِلتا رہتا ہوں اور وُہ بچھڑتا رہتا ہے

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

March 2021
M T W T F S S
1234567
891011121314
15161718192021
22232425262728
293031  
Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: