نظم ۔۔۔ سلمان حیدر

دھند لکا

سلمان حیدر

کچھ لڑکیوں سے محبت کرنے کے سوا کچھ نہیں کیا جا سکتا

کچھ محبتوں پر نظمیں لکھنے کے علاوہ کچھ ممکن نہیں

کچھ نظمیں صرف ادھوری رہنے کے لیے شروع ہوتی ہیں

کچھ زخم صرف کریدنے کے لیے مندمل کیے جاتے ہیں

چائے کے کچھ کپ صرف ٹھنڈے ہونے کے لیے بنائے جاتے ہیں

ادھوری نظموں اور کریدے ہوئے زخموں پر پپپڑی جم جاتی ہے

ٹھنڈی چائے پر جم جانے والی جھلی کی طرح

ادھوری نظمیں پوری کرنا زخم کریدنے جیسا تکلیف دہ ہے

اور ٹھنڈی چائے جیسا بدمزہ ہے

پرانے زخم کریدے جا سکتے ہیں

ہاتھ سے رکھی ہوئی پیالی اور نظم دوبارہ نہیں اٹھائی جا سکتی

محبت ہر بار نئے سرے سے کی جانی چاہئے

چائے سے اٹھتی بھاپ عینک کے شیشے دھندلا دیتی ہے

نظم اور محبت اپنے پار دیکھنے دیں

تو ان کا ذائقہ ختم ہو جاتا ہے۔

Similar Posts:

Facebook Comments Box

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

January 2022
M T W T F S S
 12
3456789
10111213141516
17181920212223
24252627282930
31