ہجر کا پرتو ۔۔۔ تنویر قاضی

ہجر کا پرتوِحسیں وصل کے اژدھام میں

 

تنویر قاضی

 

آنکھوں کے ڈوروں میں نہیں

گُلدستہءِ نیند میں کہیں

رہتا ہے ایک خواب سا

بارہ دری کی اوٹ میں

باغ کے

سُرخ گلاب سا

کالے ہرن نے راستہ

روکا ہوا ہے

رات سے

بانوءِ شہر سے کیا

وعدہ

زوالِ شب میں ہے

دن کا کبوترِ سپید

اب تک ملال شب میں ہے

ہجر کا پرتوِ حسیں

عرشِ بریں سے

خاک تک

وصل کے اژدھام میں

جس کا سرکنا سب میں ہے

جلسہءِ عارض و لب میں ہے

سیاہ غزال کی تلاش

 

Tanveer Qazi
READ MORE FROM THIS AUTHOR

Tanveer Qazi is an Urdu language poet and fiction writer from Pakistan.

Read more from Tanveer Qazi

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

November 2020
M T W T F S S
 1
2345678
9101112131415
16171819202122
23242526272829
30  
Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: