نظم

( شکیلہ عزیز زادہ)

(کابل۔ افغانستان )

اچھا شگن نہیں ہیں،

یہ الفاظ،

مت کہنا مجھے کہ بہشت

میرے لبوں کے بیچ کھلتی ہے

میری چھاتیوں کی وادی میں

خود خدا بھی بہک گیا

میں آؤں گی

اور ایک بار پھر

تمہاری سانس، سانس بھرے گی

میرے اندر

تمہارا سینہ معمور ہو گا

میری مہک سے

تمہاری زبان برسائے گی

بارش ، بارش

میری جلد پر ایک بار پھر بارش

میں پگھل جاؤں گی

اور اس بار

جب تم آؤ گے، وہ چمک لے کر

اپنی آنکھ میں

اور جھکو گے مجھے چاک کرنے

تو نہ رہے گا تمہارے اندر

شک کا کوئی سایہ بھی

اس کالے بِلے کی طرح جو جھپٹا

اپنی گھات سے

جس نے ابھی ابھی میرا رستہ کاٹا

اور شکار بنایا

تمہارے دروازے بیٹھی چڑیا کو

حتیٰ کہ وہ نڈھال ہو پڑی

گنگ اور اسیر

They don’t bode well

These chirps

The door to paradise, don’t tell

Opens between my lips

In the cleft, between my breasts

God himself tripped in jests

I’ll come

And again

Your breath will breathe

Inside me

Your lungs will fill

With my fancy

Your tongue will

Rain, rain

Rain on my skin again

I’ll give in

And by this tie

When you come with that glint

In your eye

‘ll bend on tearing me splint

You’ll be without a shadow of doubt

Like the black cat that leapt

From hiding; outflown

Just now; across my path crept

Has hunted down

The sparrow at your door

Till she fell

Captive and forlore

This metaphorical poem has been composed by Shakila Azziz Zada (1964 Kabul, Afghansitan) in Dari.

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: