غزل ۔۔۔ علی زریون

غزل

علی زریون

میں عشق الست پرست ہوں، کھولوں روحوں کے بھید​

مرا نام سنہرا سانورا، اک سندرتا کا وید​

مری آنکھ قلندر قادری، مرا سینہ ہے بغداد​

مرا ماتھا دن اجمیر کا، دل پاک پٹن آباد​

میں کھرچوں ناخنِ شوق سے ،اک شبد بھری دیوار​

وہ شبد بھری دیوار ہے، یہ رنگ سجا سنسار​

میں خاص صحیفہ عشق کا، مرے پنے ہیں گلریز​

میں دیپک گر استھان کا، مری لو میٹھی اور تیز​

میں پریم بھری اک آتما، جو خود میں دھیان کرے​

میں جیوتی جیون روپ کی، جو ہر سے گیان کرے​

یہ پیڑ پرندے تتلیاں، مری روح کے سائے ہیں​

یہ جتنے گھایل لوگ ہیں، میرے ماں جائے ہیں​

میں دور حسد کی آگ سے، میں صرف بھلے کا روپ​

مرا ظاہر باطن خیر ہے، میں گیان کی اجلی دھوپ​

من مکت ہوا ہر لوبھ سے، اب کیا چنتا؟ کیا دُکھ؟​

رہے ہر دم یار نگاہ میں، مرے نینن سکھ ہی سکھ​

ہیں ایک سو چودہ سورتیں، بس اک صورت کا نور​

وہ صورت سوہنے یار کی، جو احسن اور بھرپور​

میں آپ اپنا اوتار ہوں، میں آپ اپنی پہچان​

میں دین دھرم سے ماورا، میں ہوں حضرت انسان​

Ali Zeryon
Ali Zeryun

Ali Zeryon is one of the finest modern Urdu poets and fictional writers. He is very famous among young people for his appealing and heart-melting mushairas.

Ali Zeryon is a multilingual poet, a lyricist, and a literary personality. He writes in Urdu, Hindi, Farsi, Punjabi, and English. He has authored many ghazals and poems, and many of his couplets are famous among Urdu speaking people.

He has millions of followers on social media, and he is very active in the literary societies of Pakistan. 

Read more from Ali Zeryon

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: