غزل ۔۔۔ کومل جویئہ

غزل

کومل جویئہ

منسوب چراغوں سے، طرفدار ہوا کے

تم لوگ منافق ہو، منافق بھی بَلا کے

کیوں ضبط کی بنیاد ہلانے پہ تُلا ہے ؟

میں پھینک نہ دوں ہجر تجھے آگ لگا کے

اک زود فراموش کی بے فیض محبت

جاوں گی گذرتے ہوئے راوی میں بہا کے

اس وقت مجھے عمرِرواں درد بہت ہے

تجھ سے میں نمٹتی یوں ذرا دیر میں آ کے

زنجیر نہیں ہوتے تعلق کہ جکڑ لو

چاہو تو بچھڑ جاؤ ابھی ہاتھ چھڑا کے

میں اپنے خدو خال ہی پہچان نہ پائی

گذرا ہے یہاں، وقت بڑی دھول اڑا کے

کرتی ہوں ترو تازہ ہری رت کے مناظر

کاغذ پہ کبھی پیڑ، کبھی پھول بنا کے

کومل جوئیہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Facebook Comments Box

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

July 2024
M T W T F S S
1234567
891011121314
15161718192021
22232425262728
293031