نظم ۔۔۔ ثروت حسین

نظم

ثروت حسین

ایک نظم کہیں سے بھی شروع ہو سکتی ہے

جوتوں کی جوڑی سے

یا قبر سے جو بارشوں میں بیٹھ گئی

یا اس پھول سے جو قبر کی پائنتی پر کھِلا

ہر ایک کو کہیں نہ کہیں پناہ مل گئی

چیونٹیوں کو جاے نماز کے نیچے

اور لڑکیوں کو میری آواز میں

مُردہ بیل کی کھوپڑی میں گلہری نے گھر بنا لیا ہے

نظم کا بھی ایک گھر ہوگا

کسی جلا وطن کا دل یا انتظار کرتی ہوئی آنکھیں

ایک پہیہ ہے جو بنانے والے سے ادھورا رہ گیا ہے

اسے ایک نظم مکمل کر سکتی ہے

ایک گونجتا ہوا آسمان نظم کے لیے کافی نہیں

لیکن یہ اک ناشتے دان میں بہ آسانی سما سکتی ہے

پھول، آنسو اور گھنٹیاں اس میںپروئی جا سکتی ہیں

اسے اندھیرے میں گایا جا سکتا ہے

تہواروں کی دھوپ میں سکھایا جا سکتا ہے

تم اسے دیکھ سکتی ہو

خالی برتنوں، خالی قمیضوں اور خالی گہواروں میں

تم اسےسن سکتی ہو

ہاتھ گاڑیوں اور جنازوں کے ساتھ چلتے ہوے

تم اسے چوم سکتی ہو

بندرگاہوں کی بھیڑ میں

تم اسے گوندھ سکتی ہو

پتھر کی ناند میں

تم اسے اُگا سکتی ہو

پودینے کی کیاریوں میں

ایک نظم

کسی بھی رات سے تاریک نہیں کی جاسکتی

کسی تلوار سے کاٹی نہیں جاسکتی

کسی دیوار میں قید نہیں کی جاسکتی

ایک نظم

کہیں بھی ساتھ چھوڑ سکتی ہے

بادل کی طرح

ہوا کی طرح

راستے کی طرح

باپ کے ہاتھ کی طرح…

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

December 2020
M T W T F S S
 123456
78910111213
14151617181920
21222324252627
28293031  
Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: