ہم موت سے پوچھتے ہیں ۔۔۔ عذرا عباس

نظم

(عذرا عباس )
ہم موت سےپوچھتے ہیں کیوں آتی ہو
اور کہاں سے
کبھی اپناٹھکانہ بھی بتاتی جاؤ
وہ اپنے موٹے بالوں کی چوٹی گھوما کر اٹھلا کر ہماری طرف دیکھتی ہے
اس کی آنکھیں سرمے سے بھری ہوتی ہیں
اس کے ہونٹوں پر گھٹیا داموں والی سرخی لگی ہوتی ہے
اس کے رخسار وں پر لگا ہوا غازہ
اس کی پرانی عمر کو چھپا کر
ہمیں دانت نکوس کر دیکھتا ہے
ہمیں ہنسی آتی ہے
وہ بھی ہنستی ہے
ہم جل جاتے ہیں
کمبخت کس کس کو گھسیٹ کر لے گئی
ہاں یہ تو ہے
وہ اپنی کمر کوکئی بل دےکرٹھمکتی ہے
اپنی سرمے سے بھری آنکھیں مٹکا کر مجھے دیکھتی ہے
آؤں گی جلدی
تمھارے پاس بھی

Azra Abbas
READ MORE FROM THIS AUTHOR

Azra Abbas is one of the finest women poets from Pakistan. She completed her master’s degree from Karachi University in Urdu literature and became a professor at government college Karachi. She is currently residing in England with her husband, a famous novelist, and poet, Anwar Sen Rai. 

She published her first work in 1981, a long feminist prose poem in the stream-of-consciousness form. She has written three collections of poetry, an autobiography, a novel, and a short story collection. 

Read more from Azra Abbas

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: