نظم کا تعاقب ۔۔۔ احیا زہرا

نظم کا تعاقب

احیا زہرا

نظم ایک خوشنما تتلی کی طرح

اُڑتے اُڑتے کہیں دور نکل گئی ہے

اور میں کسی ننھی بچی کی مانند

فِرط شوق سے مجبور ہو کر

اس کے پیچھے پیچھے دوڑی چلی جا رہی ہوں

وہ ایک لمحے کو کہیں ٹھہرتی ہے

اور میرے وجود کا احساس پا کر

پھر سے اُڑ جاتی ہے

اور میں بے چین ہو کر

پھر سے اس کے تعاقب میں لگ جاتی ہوں

نظم جانتی ہے

کہ اگر وہ میری انگلیوں کی گرفت میں آ گئی

تو اس کے تمام رنگ

میری پوروں پہ ثبت ہو جائیں گے

اور مجھے امر کر دیں گے

شاید اسی لیے

وہ مجھے آزمائے جا رہی ہے

اور کندن کرنے کی خاطر

شوق کی بھٹی میں

جلا رہی ہے !!

احیا زہرا

Facebook Comments Box

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

February 2024
M T W T F S S
 1234
567891011
12131415161718
19202122232425
26272829