Black background

اے میرے غم ۔۔۔ اختر حسین جعفری

“اے میرے غم”

اختر حسین جعفری

جَلتے مہر، خُنک مہتاب کے رنگ سمجھتے، تارِ نظر کی گِرہیں کھولتے
ریشم بُنتے عُمر کَٹی ہے
اے میرے غم! تیرے بدن کی عُریانی کا، تیری محرُومی کا دُکھ ہے
صُبح دعا میں تیرا قاصد، تیرا موذّن سب سے سچّا
سب سے زیبا
شامِ وغا میں خالی لَوٹتے ہر رہوار پہ تیری چادر
ہر چادر پر جتنا ہے خونناب، تِرا ہے
حَلقہ حَلقہ کُھلتے طوق پہ تیرے عِجز کا اسمِ اعظم
اے میرے غم!

اے میرے غم! شہرِ ناقدراں کے بے اَفلاک سِتارے!
آخرِ شب کی تاگا تاگا ٹوُٹتی ضَو میں
تیری محرُومی کا دُکھ ہے!!!

Similar Posts:

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

August 2021
M T W T F S S
 1
2345678
9101112131415
16171819202122
23242526272829
3031  
Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: