مُرغ بسمل کی مانند شب تلملائی ۔۔۔ فیض احمد فیض

نظم

( فیض احمد فیض )

مرغِ بسمل کی مانند شب تلملائی​
افق تا افق​
صبح کی پہلی کرن جگمگائی​
تو تاریک آنکھوں سے بوسیدہ پردے ہٹائے گئے​
دل جلائے گئے​
طبق در طبق​
آسمانوں کے در​
یوں کھلے ہفت افلاک آئینہ سا ہو گئے​
شرق تا غرب سب قید خانوں کے در​
آج وا ہو گئے​
قصرِ جمہور کی طرحِ نَو کے لئے آج نقشِ کہن​
سب مٹائے گئے​
سینۂِ وقت سے سارے خونیں کفن​
آج کے دن سلامت اٹھائے گئے​
آج پائے غلاماں میں زنجیرِ پا​
ایسے چھنکی کہ بانگِ درا بن گئی​
دستِ مظلوم ہتھکڑی کی کڑی​
ایسے چمکی کہ تیغِ فضا بن گئی​

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

March 2021
M T W T F S S
1234567
891011121314
15161718192021
22232425262728
293031  
Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: