غزل ۔۔۔ صابر ظفر

غزل

( صابر ظفر)

اگرچہ ہر کوئی فٹ پاتھ سے گزرتا ہے

مگر کہاں کوئی دن رات سے گزرتا ہے

اگرچہ سنتا ہے کوئی مرے سبھی دکھڑے

مگر کہاں میرے حالات سے گزرتا ہے

نہیں فراغ کہ گزرے وہ خانہ دل سے

جو شخص ارض و سماوات سے گزرتا ہے

سما گیا جو میرے ہاتھ کی لکیروں میں

وجود اس کا میرے ہاتھ سے گزرتا ہے

گزرنا چاہے جو راہ نشاط سے وہ ظفر

ہزار طرح کے صدمات سے گزرتا ہے

 

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: