پھوڑا ۔۔۔ انجلا ء ہمیش

پھوڑا

انجلاء ہمیش

آسیب سے ڈرتے ہو

آسیب تو اپنے آپ سے خوف زدہ ہے

تم کیا اندھیرے سے ڈرتے ہو

تمہارا اندھیرا تو سویرے میں بدل جاۓ گا

آسیب کے اندھیرے کو دیکھو

وہ اس اندھیرے سے خوف زدہ ہے

جو اس کی زندگی میں ٹھہر گیا ہے

آسیب کے ساتھ کوئی نہیں سوتا

آسیب خود بھی نہیں سوتا

خدا سے پوچھو ، آسیب کون ہے

دوزخیوں کے جسم سے پیپ بہے گی

کون سی دوزخ!

ایک چہرہ ، جس پہ نہ آنکھیں ، نہ ناک ، نہ ہونٹ

ایک چہرہ جو پھوڑا بن گیا

دوزخ اس وجود کے ساتھ چمٹ گئ

فرشتے جب اس پھوڑے کو خدا کے سامنے حاضر کریں گے

تو جاننا چاہیں گے

کہ خلق کرنے والے

اس کا گناہ کیا تھا

اس نے کب تیری نافرمانی کی

Facebook Comments Box

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

February 2024
M T W T F S S
 1234
567891011
12131415161718
19202122232425
26272829