دو جہاں ۔۔۔ نائلہ ظفر مرزا

دو جہاں

نائلہ ظفر مرزا

 میں نے سمجھا تھا

میں نے سمجھا تھا

تم ھمیشہ  میر ے ھو

میں خو اب بنو ں

یا تو ڑ دوں

میں یاد رکھو ں یا

بھو ل جا و ں

تیر ے پاس ر ھوں

یا دور چاو ں

تیر ے سب اختیا ر میر ے ھیں

میں نے سمجھا تھا

ا در ا ک ھے تجھے سب

تو میر ا یقیں میر ا گما ن ھے

میر ا محر م میر ا راز د ان ھے

بھر م تھا کہ تو

آ شنا ء رگ و جا ن ھے

میر ی ذ ا ت میں پنہا ں ھے

نہ  کو ٸ چا ہت تیر ے بعد

تو میر ا پو ر ا چہا ں ھے

مگر فقط ا ک بو ل سے

سب کھو گیا

و ہ ا عتبا ر گیا

قو ل و قر ا رگیا

وہ ز میں گًی

آ سما ن گیا

کسی کا د و جہا ں گیا

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: