یہ خلا پُر نہ ہوا ۔۔۔۔ ن۔ م۔ راشد

یہ خلا پُر نہ ہوا

ن م راشد

ذہن خالی ہے

خلا نور سے یا نغمے سے

یا نکہتِ گُمِ راہ سے بھی

پُر نہ ہوا

ذہن خالی ہی رہا

یہ خلا حرفِ تسلّی سے

تبسّم سے

کسی آہ سے پُر نہ ہوا

اک نفی لرزشِ پیہم میں سہی

جہدِ بے کار کے ماتم میں سہی

ہم جو نارس بھی ہیں غم دیدہ بھی ہیں

اس خلا کو

(اسی دہلیز پہ سوئے ہوئے سرمست گدا کے مانند)

کسی مینار کی تصویر سے

یا رنگ کی جھنکار سے

یا خوابوں کی خوشبوؤں سے

پُر کیوں نہ کریں ؟

کہ اجل ہم سے بہت دور

بہت دور رہے ؟

نہیں ہم جانتے ہیں

ہم جو نارس بھی ہیں غم دیدہ بھی ہیں

جانتے ہیں کہ خلا ہے وہ جسے موت نہیں

کس لیے نور سے یا نغمے سے

یا حرفِ تسلّی سے اسے ” جسم ” بنائیں

اور پھر موت کی وارفتہ پذیرائی کریں ؟

نئے ہنگاموں کی تجلیل کا در باز کریں

صبح تکمیل کا آغاز کریں ؟

Similar Posts:

Facebook Comments Box

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

January 2022
M T W T F S S
 12
3456789
10111213141516
17181920212223
24252627282930
31