غزل ۔۔۔ رفعت ناہید

غزل

رفعت ناہید

ڈوب جاتا تو کسی اور طرف سے آتا

جگمگاتا تو کسی اور طرف سے آتا

چاند کا آنا ضروری تھا مرے ملنے کو

ابر چھاتا تو کسی اور طرف سے آتا

وہ ستارہ سا دبے پاؤں چلا آتا ہے

 جھلملاتا تو کسی اور طرف سے آتا

خیر گذری کہ اسے روک لیا تھا میں نے

لوٹ جاتا تو کسی اور طرف سے آتا

طے ہوا یہ تھا کہ میں پچھلی گلی سے آتی

وہ جو آتا تو کسی اور طرف سے آتا

ہاں یہی راہ تھی آسان اسے آنے میں

ہچکچاتا تو کسی اور طرف سے آتا

یاد تھے اس کو سبھی موڑ مرے رستے کے

بھول جاتا تو کسی اور طرف سے آتا

Facebook Comments Box

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

March 2024
M T W T F S S
 123
45678910
11121314151617
18192021222324
25262728293031