لے ۔۔۔ سبین علی

لَے

سبین علی

محبت تو وہ لے ہے
جو ہنسلی سے کٹی
بانسری سے نکلتی ہے
جسے وحشی درندے بھی
محویت سے سنتے ہیں
میں تو دشت حیات میں
محبت کی نغمہ سرا تھی
اب آنکھیں پھاڑے تکتی ہوں
نفرتوں کے مکتوب
واہموں اور الاہموں کی فردِ جرم
دور رہو ۔۔۔۔ کے فرمان امروز
میری گلیوں میں رقصاں ہوس
جا بجا
مادہ منویہ کی آلودگی
جو گلیوں گلیاروں
شاہراؤں چوباروں میں بکھری
نوچتی ہے انسانیت کو
میری نَے اداس ہے
حیران ہے
اور میں ہونٹوں کے ساتھ لگائے اسے
سوچتی ہوں یا الٰہی
محبت کی دھن کہاں سے چھیڑوں
کہ ٹھٹھک جائیں ذرا
وحشی درندے
مگر دشت میں فقط
ریت اڑتی ہے

Similar Posts:

Sabeen Ali
Sabeen Ali
READ MORE FROM THIS AUTHOR

Sabeen Ali is a prominent Pakistani short story writer, poet and a prominent literary figure. She is the editor of Deedban, and writes in Urdu, English, and Punjabi. Her works have been published in many renowned magazines like Funoon, Adab-e-Latif, Sangat, Shayer, Salis, Darbhanga Times, Istafsar and many others. 

Read more from Sabeen Ali

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

July 2021
M T W T F S S
 1234
567891011
12131415161718
19202122232425
262728293031  
Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: