غزل ۔۔۔ ڈاکٹر یٰٰسین عاطر

غزل

ڈاکٹر یسین عاطر

مرا یہ ذہن کہاں سب حواس پہنے ہے

تری ہی سوچ ہے,ترا قیاس پہنے ہے

عجب یہ دور کہ ہر رت میں آگئی شدت

بہار وہ ہے کہ پتھر بھی گھاس پہنے ہے

نگاہ ڈال سمندر کی بےبسی پہ کبھی

پھٹا پرانا زمیں کا لباس پہنے ہے

اے روشنی تو یہاں جذب ہو نہیں سکتی

یہ آئینہ ہے کہ جو انعکاس پہنے ہے

لچک کی جاگتی تفسیر مل گئی عاطر

جودیکھتا ہوں کہ پانی گلاس پہنے ہے

Similar Posts:

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

August 2021
M T W T F S S
 1
2345678
9101112131415
16171819202122
23242526272829
3031  
Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: