ایک ویران گاوں میں ۔۔۔ زاہد ڈار

ایک ویران گاﺅں میں

زاہد ڈار

انہی سوکھے ہوئے میدانوں میں

اب جہاں دھوپ کی لہروں کے سوا کچھ بھی نہیں

سبز، لہراتے ہوئے کھیت ہوا کرتے تھے

لوگ آباد تھے، پیڑوں کی گھنی چھاﺅں میں

محفلیں جمتی تھیں، افسانے سنے جاتے تھے

آج ویران مکانوں میں ہوا چیختی ہے

دھول میں اڑتے کتابوں کے ورق

کس کی یادوں کے ورق، کس کے خیالوں کے ورق

مجھ سے کہتے ہیں کہ رہ جاﺅ یہیں

اور میں سوچتا ہوں صرف اندھیرا ہے یہاں

 پھر ہوا آتی ہے، دیوانی ہوا

اور کہتی ہے: نہیں، صرف اندھیرا تو نہیں

یاد ہیں مجھ کو وہ لمحے جن میں

لوگ آزاد تھے اور زندہ تھے

آﺅ، میں تم کو دکھاﺅں وہ مقام….

….ایک ویران جگہ، اینٹوں کا انبار، نہیں، کچھ بھی نہیں

 اور وہ کہتی ہے یہ پیار کا مرکز تھا کبھی

کس کی یاد آئے مجھے، کس کی، بتاﺅ، کس کی!

اور اب چپ ہے ہوا، چپ ہے زمیں

بول اے وقت! کہاں ہیں وہ لوگ

جن کو وہ یاد ہیں، جن کی یادیں

ان ہواﺅں میں پریشان ہیں آج

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

March 2021
M T W T F S S
1234567
891011121314
15161718192021
22232425262728
293031  
Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: