غزل ۔۔۔ بشریٰ حزیں

غزل

( بشری ٰ حزیں )


جی کردا اے دھرتی دھو کے ۔۔۔۔۔۔۔۔ اسماناں تے سُکھنے پاواں
جی کردا اے سوہنے ربّ دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میلی دُنیا نوں لشکاواں

لیکھاں دے نا رگڑے ہوون ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سارے ماڑے تگڑے ہوون
جی کردا اے ساریاں روندیاں اکھیاں نوں میں ۔۔ رجّ ہساواں

مُلّ انصاف نا وکدا ہووے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہووے نالے دِسدا ہووے
جی کردا اے بے تقصیراں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کدھرے وی نا ہون سزاواں

تیرے میرے دے ایہہ جھیڑے ۔ ہو جاون سبھ دور بکھیڑے
جی کردا اے چارے پاسے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پیار وفا دیاں ہون فضاواں

جنگل دے وچ منگل ہووے ۔۔۔۔۔۔۔ شہراں دے وچ لہراں بہراں
ہسدے وسدے ہوون سارے ۔۔۔۔۔۔۔ مک جاون سبھ ہوکے ہاواں

کھلّے بوہے ، کھُلیاں باہواں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سبھناں تے ہووے اعتبار
جی کردا اے دھوکے والے سارے قِصّے ۔۔۔۔۔۔ جڑ توں مکاواں

چِٹّیاں راتاں کالے دن نا ہوون ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سدھراں نا روون
جی کردا اے سارے ٹُٹّے ہوٸے دل میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سینے لاواں

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: