مجھے پڑھ نہیں سکتے ۔۔۔ ابن کلہوڑو

مجھے پڑھ نہیں سکتے ۔۔

ابن کلہوڑو

آپ مجھے پڑھ نہیں سکتے

کیوں کے میری نظمیں کافر ہیں ۔۔۔۔۔۔۔

میری اس نظم میں

محلے کی جوان بیواہ کی اداسی

خدا سے نالاں ہے ۔۔۔۔

جس کے جذبے اتنے تو گرم ہیں

جن پر پانی چھڑکنے کے لیے ۔۔

میرے پاس وحی جتنی سکت نہیں ہے ۔

جس کا شوہر وقت سے پہلے مر گیا ہے

جس کی یاد ۔۔۔۔۔۔۔

اس کے دل کو اتنی نہیں ۔

جتنی اس کے جسم کو ہے ۔

وہ بھوک تو برداشت کر لیتی ہے

لیکن انتظار برداشت نہیں کر پاتی

گیت گنگنانے کے بعد وہ رو پڑتی ہے

لیکن سونے سے پہلے قلمہ نہیں پڑھتی

کیوں کے خواب اس سے ہم بستری کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!

ترجمہ فاضل ہالیپوتہ

Similar Posts:

Facebook Comments Box

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

October 2021
M T W T F S S
 123
45678910
11121314151617
18192021222324
25262728293031
Show Buttons
Hide Buttons