بے فیض ساعتوں میں ۔۔۔ ڈاکٹر ابرار احمد

نظم

ڈاکٹر ابرار احمد

بے فیض ساعتوں میں

منہ زور موسموں میں

خود سے کلام کرتے

اکھڑی ہوئی طنابوں

دن بھر کی سختیوں سے

اکتا کے سو گئے تھے

بارش تھی بے نہایت

مٹی سے اٹھ رہی تھی

خوشبو کسی وطن کی

خوشبو سے جھانکتے تھے

گلیاں مکاں دریچے

اور بچپنے کے آنگن

اک دھوپ کے کنارے

آسائشوں کے میداں

اڑتے ہوئے پرندے

اک اجلے آسماں پر

دو نیم باز آنکھیں

بیداریوں کی زد پر

تا حد خاک اڑتے

بے سمت بے ارادہ

کچھ خواب فرصتوں کے

کچھ نام چاہتوں کے

کن پانیوں میں اترے

کن بستیوں سے گزرے

تھی صبح کس زمیں پر

اور شب کہاں پہ آئی

مٹی تھی کس جگہ کی

اڑتی پھری کہاں پر

اس خاک داں پہ کچھ بھی

دائم نہیں رہے گا

ہے پاؤں میں جو چکر

قائم نہیں رہے گا

دستک تھی کن دنوں کی

آواز کن رتوں کی

خانہ بدوش جاگے

خیموں میں اڑ رہی تھیں

آنکھوں میں بھر گئی تھی

اک اور شب کے نیندیں

اور شہر بے اماں میں

پھر صبح ہو رہی تھی

Similar Posts:

Facebook Comments Box

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

November 2021
M T W T F S S
1234567
891011121314
15161718192021
22232425262728
2930