عطا شاد

کل بهی یہی لمحوں کی جهیل تهی

اور آوازوں کے کنکر تهے

کل بهی ہوائیں موجبار تهیں

کل بهی فضا میں سناٹے کے دهول جمی تهی

کل بهی بلکتے فریادی ہونٹوں پہ کرب حرف تهے

کل بهی تهے، تم گوش کر

آباد صدا کے ویرانے میں

کل بهی رت کی چیخ تهی

اور چپ غوغا تهی

کل بهی پتهر تهے، سر تها اور آئینہ تها

کل بهی یہی، سب چہرے حس تهے

آج یہی سب نقش نظر ہیں

بس اب میں وہ نہیں ہوں (جو ہوں)

سب پتهر سب سناٹے سب درد صدا ہیں

سب آوا ہیں

تم اب جو ہو، وہی نہیں ہو

اب کے بام پہ میں ہوں

اور تم تہہ زمیں ہو

Similar Posts:

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

August 2021
M T W T F S S
 1
2345678
9101112131415
16171819202122
23242526272829
3031  
Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: