نظم ۔۔۔ عذرا عباس

نظم

( عذرا عباس )

اگر تم مجھے ایک برقعہ پہنا کر ڈھانپنا چاہو
تو
کیا میری چھاتیوں کا غرور
تمھاری آنکھوں سے چھپ جائے گا
اگر تم مجھے دو برقعے پہنا دو
یہ غرور پھر بھی تمھاری نظروں سے چھپ نہیں سکے گا
چلو پہناتے جاؤ مجھے
تلے اوپر بہت سے لبادے
اور چھوڑ دو میری آنکھیں صرف یہ دیکھنے کے لئے
کہ تمھاری آنکھیں اب کیادیکھ رہی ہیں
مجھے یقین ہے
تم میری چھاتیوں کے غرور کو ڈھونڈھ رہے ہو گے
تلے اوپر لدے ہوئے
میرا جسم چھپانے والے کپڑوں کے اوپر
تمھاری بینائی کے اسکرین ونڈ پر پانی کے قطرے
چھپاکے مار رہے ہوں گے
اور میری غرور سے بھری چھاتیاں
تمھاری شکست پر
کبھی نا ختم ہونے والے غرور
سے بھری مسکرا رہی ہوں گی

.

Azra Abbas
READ MORE FROM THIS AUTHOR

Azra Abbas is one of the finest women poets from Pakistan. She completed her master’s degree from Karachi University in Urdu literature and became a professor at government college Karachi. She is currently residing in England with her husband, a famous novelist, and poet, Anwar Sen Rai. 

She published her first work in 1981, a long feminist prose poem in the stream-of-consciousness form. She has written three collections of poetry, an autobiography, a novel, and a short story collection. 

Read more from Azra Abbas

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: