نظم ۔۔۔ خدا بخش ابرو

نظم

خدا بخش ابڑو

چیخیں کتنی چیخیں

 جو گلے میں

 پھنس کر رہ گئی ہیں

 کتنے لفظ ہیں جو زباں تک آتے آتے

 دم توڑ دیتے ہیں

میری طرح میری آنکھوں نے بھی

 چُپ سادھ لی ہے

 ایک زمانہ تھا

 جب وہ بھی بغیر بولے

 رہ نہیں پاتی تھیں اب بغیر بند کیےبھی

 سوتی رہتی ہیں

 چُپ کی چادر صرف میں نے نہیں

 میری آنکھوں نے بھی اوڑھ لی ہے

 اور چیخیں

 وہ توکہیں کھو ہی گئی ہیں

Similar Posts:

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

August 2021
M T W T F S S
 1
2345678
9101112131415
16171819202122
23242526272829
3031  
Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: