دل چاہتا ہے ۔۔۔ نور الہدیٰ شاہ

‏دل چاہتا ہے

نور الہدی شاہ

دل چاہتا ہے

غارِ اصحابِ کہف میں جا کر سو جاؤں

جب نیند سے اٹھوں

میرا زمانہ گزر چکا ہو

میرے سکّے کھوٹے ہو چکے ہوں

میری بات کوئی نہ سمجھتا ہو

مجھے کوئی نہ جانتا ہو

رب سے پوچھوں

بتا، اب کہاں جاؤں

رب کہے

تیرے زمانے اب نہیں رہے

انسان سبھی مر چکے ہیں

صرف ہجوم زندہ ہے

جنون زندہ ہے

تو لوٹ جا

غارِ اصحابِ کہف میں

پھر سے جا کر سو جا

Similar Posts:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

September 2021
M T W T F S S
 12345
6789101112
13141516171819
20212223242526
27282930  
Show Buttons
Hide Buttons