تُھو۔ تُھو ۔۔ ڈاکٹر صابرہ شاہین

تُھو ۔۔تُھو

ڈاکٹرصابرہ شاہین

یہ کس نے کہہ دیا تم سے؟

 کہ تم میری ضرورت ہو۔۔۔

 ضرورت۔۔

۔ پیر پھیلائے

 تو آلفت۔۔

۔ بن ہی جاتی ہے۔

 یہ ممکن ہو بھی سکتا تھا۔۔۔

۔ ضرورت عشق ہو جاتی۔۔۔

 محبت رنگ برساتی۔۔۔۔

 مگر اے جنس کے ماتے۔۔۔۔

 تمہیں تو خود تمہاری اپنی ٹانگوں ہی کے اندر کی وہی

 رانوں کے بیچوں بیچ کی۔۔۔ داری ‘غلامی۔۔بے بسی

 آخر۔۔۔۔۔

 عجب سی شرمناکی سے

 مقام_آدمیت کی فرازی سے کہیں نیچے سیہ پاتال تک

لائی۔

وہی ہو۔۔۔تم ؟

 وہی ناں۔۔؟

 جو کہ۔۔۔ کمسن

چار برسوں کی

 بہت کومل سی بچی پر۔۔۔۔

۔ مکمل۔۔۔ چار دن اپنا کریہہ یہ لنگ

 نچاتے ہو۔۔۔۔؟

 فقط بچی ہی کیوں ؟ آخر

 کہ تم کو۔۔ تو

 یونہی چوپائے کی جاتی سے

 کتیا ہی جو مل جائے

 ٹو تم اچھلو۔۔ ہو

 کودو ہو۔۔۔۔۔

Similar Posts:

Website | READ MORE FROM THIS AUTHOR

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

April 2021
M T W T F S S
 1234
567891011
12131415161718
19202122232425
2627282930  
Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: