خواب نگری میں ۔۔۔ نائلہ راٹھور

خواب نگری میں

نائلہ راٹھور

خواب نگری میں

نیندوں کے عوض آنکھیں رہن رکھوا دی ہیں

ناتمام آرزوءیں تھکن سمیٹے یاس کی گود میں محو خواب ہیں

سوچوں میں خار اگ آئیں تو تخیل زیر اگلنے لگتا ہے

یاد کسک کے سوا کچھ نہیں

محبت روپہلا خواب

گر آنکھوں کے دریچوں پر دستک دے کر لوٹ بھی جائے

اسکی دستک بازگشت کی صورت

ماہ و سال تک سماعتوں میں گونجتی رہتی ہے

یہ لامحدود تنہائی

خود سے بغاوت کا ثمر ہی تو ہے

نخل اداسی پر خامشی اوس کی صورت برستی ہے

یہ تنہائی مرے وجود کو آباد رکھتی ہے

Similar Posts:

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

April 2021
M T W T F S S
 1234
567891011
12131415161718
19202122232425
2627282930  
Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: