رات کا ڈر ۔۔۔ شہناز پروین سحر

رات کا ڈر
شہناز پروین سحر
——-
صبحدم
صحن میں
اجنبی پاؤں کے کچھ نشاں مل گئے
وہ نشاں دیکھ کر
جھرجھری آگئی
آنے والوں کے قد بت کا
ہیبت کا ۔۔۔۔
اندازہ ہوتا رہا
کون ہے تاک میں
مجھ سے کیا چاہتا ہے
میرے گھر میں نہ زیور نہ زر ہے کوئی
کان کی ننھی ننھی یہ دو بالیاں ہیں فقط
میں نے کانوں میں پہنی ہوئی ہیں
کیا وہ یہ بالیاں نوچنے آئے تھے
چوڑیاں دیکھی ہوں گی انہوں نے میرے بازوؤں میں کبھی
وہی چوڑیاں بیچ کر میں نے بچوں کو رخصت کیا ہے
کیا وہی چوڑیاں ان کی نیت میں ہیں
کیا وہی چوڑیاں مجھ سے مانگیں گے وہ
صحن میں میرے بیٹوں کی دو گاڑیاں ہیں
جنہیں اب کوئی بھی چلاتا نہیں ۔۔
میرے بیٹے تو پردیس میں جا چکے
کیا انہی گاڑیوں کے لیئے آئے تھے ۔۔۔۔
آج پھر
کالی سنسان شب
اور
پھر سے وہی آہٹیں
آج تو کوئی دروازے تک آگیا
اُف ۔۔۔ وہ ہینڈل گھمانے لگا
کون ہے ۔۔۔ ؟
کون ہے ۔۔۔ بولتے کیوں نہیں ۔۔۔ ؟؟؟
کس لیئے آئے ہو
۔۔۔۔۔۔
کون ہے ؟ ۔۔۔ کون ہے ۔۔۔ ؟؟؟؟
۔۔۔۔۔
کوئی ہے ۔۔۔
کوئی ۔۔۔۔۔۔۔
ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: