غزل ۔۔۔ شہناز پروین سحر

غزل
شہناز سَحرؔ

معبوُد تُجھ سے ایک جَبِیں چاہیے مجھے

پھر اُس کے بعد کُچھ بھی نہیں چاہیے مجھے

تیرے جہاں پہ اپنا جہاں کیوں میں وار دُوں

کوئی بہشت ہے، تو یہیں چاہیے مجھے

پرواز کیا کرُوں کسی بنجر فلک پہ مَیں

اُڑنے کے واسطے بھی، زَمِیں چاہیے مجھے

دَھوکا مِلے تو پُوری توانائی سے مِلے!

جُھوٹی شکست بھی تو، نہیں چاہیے مجھے

ہر روز ٹُوٹتے ہیں بَھروسے کے آئینے

خنجر بَکف یقین، نہیں چاہیے مجھے

اب آرزُو فلک یا سِتارے نہیں رہے

مٹّی کی گود میں ہی یقیں چاہیے مجھے

میں کیا کرُوں، کہ میری ضرُورت ہیں نفرتیں

اب تو سحؔر خلُوص نہیں چاہیے مجھے

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

March 2021
M T W T F S S
1234567
891011121314
15161718192021
22232425262728
293031  
Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: