غزل ۔۔۔ تنویر قاضی

غزل

تنویر قاضی

خواہشِ در بدری رہتی ہے

میرے ساتھ ایک پری رہتی ہے

جمع کرتا ہوں ملاقات کے رنگ

ٹوٹتی بارہ دری رہتی ہے

دیکھے ہر گام رفو گر پھرتے

ہر گلی عشوہ گری رہتی ہے

خاک میں خاک کا ملنا بے کل

اور تری کُوزہ گری رہتی ہے

دیکھ تو لیں کبھی مڑ کر آنکھیں

جن کے کونوں میں تری رہتی ہے

چُھپتا ہے زخم انا کے پیچھے

ٹوہ میں چارہ گری رہتی ہے

چُومتا دیکھا گیا خالی پن

یاد کی ناف بھری رہتی ہے

وہ زلیخا سی کنویں کی اک بیل

بُوئے کنعاں سے ڈری رہتی ہے

Similar Posts:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

September 2021
M T W T F S S
 12345
6789101112
13141516171819
20212223242526
27282930  
Show Buttons
Hide Buttons