نظم ۔۔۔ اختر حسین جعفری

نظم

اختر حسین جعفری

۔۔۔۔
شام ڈھلے تو
میلوں پھیلی خوشبو خوشبو گھاس میں رستے
آپ بھٹکنے لگتے ہیں
زلف کھلے تو
مانگ کا صندل شوق طلب میں
آپ سلگنے لگتا ہے
شام ڈھلے تو
زلف کھلے تو لفظوں! ان رستوں پر جگنو بن کر اڑنا
راہ دکھانا
دن نکلے تو تازہ دھوپ کی چمکیلی پوشاک پہن کر
میرے ساتھ گلی کوچوں میں
لفظوں! منزل منزل چلنا
ہم دنیا کو حرف و صدا کی روشن شکلیں
پھول سے تازہ عہد اور پیماں دکھلائیں گے
دیواروں سے گلزاروں تک
تنہائی کی فصل اگی ہے
دن نکلے تو دردِ رفاقت
ہم سب میں تقسیم کریں گے

Similar Posts:

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

April 2021
M T W T F S S
 1234
567891011
12131415161718
19202122232425
2627282930  
Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: