مائے موڑ جے سکنی ایں موڑ

مائے  موڑ جے سکنی ایں موڑ

شاہ حسین

 

لکھی لوح قلم دی قادر نے مائے موڑ جے سکنی ایں موڑ

لکھا لیکھ جو لوح پہ قادر نے اماں موڑ سکے تو موڑ

 

ڈولی پائے لے چلے کھیڑے نہ میتھوں عذر نہ زور

ڈولی میں ڈال کے لے چلے کھیڑے میرا نہ ؑعذرنہ زور

 

رانجھن سانہوں کُندیاں پائیاں دل وچ لگیاں شور

کانٹوں میں رانجھے نے الجھایا اٹھتا ہے من مین شور

 

مچھی وانگوں میں پئی تڑفاں قادر دے ہتھ ڈور

میں تڑپوں جیسے تڑپے مچھلی قادر کے ہاتھ ڈور

 

کہے حسین فقیر سایئں دا کھیڑیاں دا کُوڑا زور

کہے حسین فقیر اللہ کا کھیڑوں کا جھوُٹا زور

 

Facebook Comments Box

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

June 2024
M T W T F S S
 12
3456789
10111213141516
17181920212223
24252627282930