ہم صرف تصویر میں خوشحال لگتے ہیں ۔۔۔ ادل سومرو

ہم صرف تصویر میں خوشحال لگتے ہیں

( ادل سومرو )

عاشقی کا موسم
زندگی میں ایک بار آتا ہے
ہم جیسے لوگ اس موسم میں بھی
نوکری کی تلاش میں رہتے ہیں
اور بال سفید ہوجاتے ہیں
ہم اسٹوڈیو کی ٹائی پہن کر
فوٹو کھنچواتے ہیں
اور سرکاری و غیر سرکاری اداروں کو
درخواستیں بھیجتے رہتے ہیں
سکھی زندگی کے خواب
دیکھتے رہتے ہیں
ہم صرف تصویر میں خوشحال لگتے ہیں
انٹرویو لینے والے افسر
پتھر کی آنکھوں سے دیکھتے ہیں
اور وہی سوالات پوچھتے ہیں
جن کے جوابات
پہلے ہی سے درخواست میں
درج ہوتے ہیں
پاگل ماں کو
کون سمجھائے کہ
نوکری صرف دعاؤں سے نہیں ملتی
دعائیں تو
شہر کے دھویں میں
گم ہوجاتی ہیں
گاڑیوں کے نیچے آکر
مرجاتی ہیں
جن کو ایدھی کا کفن بھی
نصیب نہیں ہوتا

Read more from Adal Somro

Read more Urdu Poetry

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: