شب گزیدہ ۔۔۔ عمارہ عامر خٹک

شب گزیدہ

عمارہ عامر خٹک

میں نے اپنی آنکھوں کی

مشعلیں بجھا دی تھیں

میں نے اپنی پلکوں کی

چلمنیں گرا دی تھیں

آنسووں کی خوشبو کو

کتنی دیر روکا تھا

چاندنی کے گیتوں کو

کتنی بار ٹوکا تھا

پھر یہ میری راتوں میں خواب کیوں اتر آئے

کس نے کہہ دیا ان سے

یہ مکان خالی ہے

یہ اداس دل دھرتی

درد کی سوالی ہے

بند ان کواڑوں سے

چاندنی کی کرنوں سے

ناگ کیسے در آئے خواب کیوں

Facebook Comments Box

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

June 2024
M T W T F S S
 12
3456789
10111213141516
17181920212223
24252627282930