اگر ہنسنا چاہتے ہو تم ۔۔۔ عذرا عباس

اگر ہنسنا چاہتے ہوتم
تو ہنس سکتے ہو
اپنی جیبوں کو جو آنسؤں سے بھری ہوئی ہیں
ان کو باہر جا کر جس جگہ پانی جمع ہے
جھاڑ آؤ
ان کے ضائع ہونے کا ملال نہ کرنا
یہ پھر آجائیں گے
لیکن میں کہہ رہی ہوں
تم کو ہنسنابھی ہے
اتنا کہ جو تمھیں روتے دیکھنا چاہتے ہیں
وہ دھوکا کھا جائیں
اوررونے لگیں
کہ ہم کیوں ہنس رہے ہیں
چلو ان کو چھوڑو
تم یہ تو کر سکتے ہو
کہ اپنے اپنے چہروں سے کہو کہ بسورنا چھوڑ دیں
اور یہ بھی نہیں تو اپنی آنکھوں میں ہنسی کہیں سے مستعا رلے کر بھر لو
تبدیلی کا امکان اب کم ہوتا جا رہا ہے
کم ازکم اپنی چہروں کی بناوٹ کوتو بدل لو
اور انتظار کرو
لفظوں کی ہیرا پھیری کہیں
ہوا میں نہ تحلیل ہو جائے
اور تم اپنے خوابوں کے محل سےخود کو چھڑا نہ سکو
اور کہیں بھول نہ جاؤ
تم کو خوابوں سے باہر جانا ہے

 

Read more from Azra Abbas

Read more Urdu Poetry

Similar Posts:

Facebook Comments Box
Azra Abbas
READ MORE FROM THIS AUTHOR

Azra Abbas is one of the finest women poets from Pakistan. She completed her master’s degree from Karachi University in Urdu literature and became a professor at government college Karachi. She is currently residing in England with her husband, a famous novelist, and poet, Anwar Sen Rai. 

She published her first work in 1981, a long feminist prose poem in the stream-of-consciousness form. She has written three collections of poetry, an autobiography, a novel, and a short story collection. 

Read more from Azra Abbas

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

October 2021
M T W T F S S
 123
45678910
11121314151617
18192021222324
25262728293031
Show Buttons
Hide Buttons