غزل ۔۔۔ غلام حسین ساجد

غزل

(غلام حسین ساجد)

عشق سے اور کار دنیا سے حذر کرتا ہوں میں

اب فقط اپنی معیت میں بسر کرتا ہوں میں

اک اندھیرے میں بھٹکتے رہ نہ جایئں میرے خواب

اپنی آنکھوں کو اگر وقف سحر کرتا ہوں میں

وہ نہتا کر نہ پایئں گے سر میداں مجھے

خلق اپنی خاک سے تیغ و سپر کرتا ہوں میں

عکس بن کر کب تلک میں اسکی آنکھوں میں رہوں

آیئنے کو کل سے اپنا مستقر کرتا ہوں میں

راہ میں پڑتا ہے شہر عشق میں دشت جنوں

گاہے اس دنیائے وحشت کا سفر کرتا ہوں میں

کھینچ دیتا ہے کوئی دیوار گریہ بیچ میں

جب پلٹ کر اس دریچے پر نظر کرتا ہوں میں

کیا وہ ملنے کے لئے آ پائے گا ساجد مجھے

اپنے آنے کی اگر اسکو خبر کرتا ہوں

Similar Posts:

Facebook Comments Box

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

January 2022
M T W T F S S
 12
3456789
10111213141516
17181920212223
24252627282930
31