نئی شرطیں ۔۔۔ کشور ناھید

نئی شرطیں

بدلنا جو چاہو

تو اپنے ہی ہاتھوں کی جنبش کو بدلو

سمٹنا جو چاہو

تو اپنے گریباں کا خود چاک دیکھو

لچکنا جو چاہو

تو پھر لغزشوں سے مرصع یہ رفتار بدلو

سنورنا جو چاہو

تو خوابوں کی شہزادگی کے اجڑنے پہ شکرانہ بھیجو

حال کو اپنی تصویر سے یوں علیحدہ کرو

کہ تمہیں اپنے پیروں کے نیچے

تمہارے ہی سائے کا نقطہ ملے

Kishwar Naheed is a feminist Urdu poet from Pakistan. She has written several poetry books. She has also received awards including Sitara-e-Imtiaz for her literary contribution towards Urdu literature.

Read more from Kishwar Naheed

Read more from Kishwar Naheed

Read more Urdu Poetry

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: