جو تیری قید سے نکلوں تو کس قفس میں رہوں

شہناز پروین سحر ۔۔۔ غزل

غزل

شہناز پروین سحر

جو تیری قید سے نکلوں تو کس قفس میں رہوں

 میرا جواب یہی ہے کہ تیرے بس میں رہوں

 بڑے خلوص سے جھیلوں میں تیری خود غرضی

 بڑے زیاں سے تیرے قریہ ہوس میں رہوں

 میں کارواں نہ سہی گرد کارواں ہی سہی

سفر کی دھول بنوں نالہ جرس میں رہوں

ورق ورق میں سنبھالا گیا ہے وقتوں کو

میں ایک ذکر مسلسل جو پیش و پس میں رہوں

سمے کی آخری سیڑھی پہ تھک کے بیٹھی ہوں

غروب جاں لئے ماٹی کی دسترس میں رہوں

پلٹ کے دیکھوں تو اکثر یہ سوچتی ہوں سحر

میں اپنی عمر گذشتہ کے کس برس میں رہوں

Shahnaz Parveen Sahar
Shahnaz Parveen Sahar
READ MORE FROM THIS AUTHOR

Shahnaz Parveen Sahar is one of the most famous literary figures of Urdu literature from Pakistan. She has written many poems in Punjabi as well.  Her diction and style, both in poetry and prose are widely appreciated among literary circles. Her best poems include ‘Kalam-e-Shayer,’ ‘Zindagi Ki Lakeer Janti thi,’ and ‘Aik Sawal.’

Read more from Shahnaz Parveen Sahar

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: