غزل ۔۔۔ ساغر صدیقی

غزل

( ساغر صدیقی )

کوئی نالہ یہاں رَسا نہ ہُوا
اُشک بھی حُرفِ مُدّعا نہ ہُوا

تلخیء درد ہی مقدّر تھی
جامِ عِشرت ہمیں عطا نہ ہُوا

ماہتابی نگاہ والوں سے
دل کے داغوں کا سامنا نہ ہُوا

آپ رَسمِ جَفا کے قائل ہیں
میں اَسیرِ غمِ وفا نہ ہُوا

وہ شہنشہ نہیں، بھکاری ہے
جو فقیروں کا آسرا نہ ہُوا

رہزن عقل و ہوش دیوانہ
عِشق میں کوئی رہنما نہ ہُوا

ڈوُبنے کا خیال تھا ساغرؔ
ہائے! ساحل پہ ناخُدا نہ ہُوا

Read more from Saghar Siddiqui

Read more Urdu Poetry

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: