سگریٹ ۔۔۔ سلمان حیدر

سگریٹ

سلمان حیدر

میں کہ اک اور گزرتے ہوے پل کے ہمراہ

اپنی خوشبو میں بسا

آپ ہی آپ سلگتا ہوا کاغذ کا وجود

ہاتھ پھیلا کے کسی راکھ سے اٹتے ہوے برتن میں مسل دیتا ہوں

راکھ کےڈھیر پہ کچھ دیر کو رکتا ہے دھواں

وو سیاہ پوش وجود

مجھ سے کہتا ہے کے تم وقت کا انداز لیے ہو لیکن

(وقت جو روز نجانے کتنے

دھیمے خاموش سلگتے ہوے انسانوں کو

خاک کے بار تلے یونہی مسل دیتا ہے)

وقت کو ہاتھ کے پھیلانے کی حاجت بھی نہیں….

Similar Posts:

Share your Thoughts:

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Calendar

August 2021
M T W T F S S
 1
2345678
9101112131415
16171819202122
23242526272829
3031  
Show Buttons
Hide Buttons
%d bloggers like this: